Go to ...
RSS Feed

ایم کیو ایم کی سیاست کا اندازجداہے اور اسکی اساس نظریاتی سیاست ہے۔یہی وجہ ہے کہ ایم کیو ایم کے فکرو فلسفہ سے متاثر ہوکر جوق در جوق مختلف سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے افراد ایم کیو ایم پاکستان میں شامل ہو رہے ہیں۔ ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی کنوینر ایم کیو ایم پاکستان او آر سی اور دیگر جماعتوں سے سینکڑوں سیاسی کارکنان کی ایم کیو ایم پاکستان میں شمولیت کراچی۔ 24جولائی 2020


متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے کنوینر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا ہے کہ ایم کیو ایم کی سیاست کا اندازجداہے اور اسکی اساس نظریاتی سیاست ہے۔یہی وجہ ہے کہ ایم کیو ایم کے فکرو فلسفہ سے متاثر ہوکر جوق در جوق مختلف سیاسی جماعتوں سے تعلق رکھنے افراد ایم کیو ایم پاکستان میں شامل ہو رہے ہیں۔ انہوں نے یہ بات او آر سی اور مختلف تنظیموں سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں سیاسی کارکنان کی ایم کیو ایم پاکستان میں شمولیت کے موقع پر ان سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ شمولیت اختیار کرنے والوں میں محفوظ سومرو (سینئر ڈسٹرکٹ آرگنائزراو آر سی ٹھٹھہ)، محمد شکیل خان جوائنٹ ڈسٹرکٹ آرگنائزر)، سلیم جوکھیو(ڈسٹرکٹ فنافس سیکریٹری)، تحصیل بھنبھورکے کونسلر محمد عامر، ڈسٹرکٹ اور یونین کونسلز کے سینکڑوں کارکنان شامل تھے۔ اس موقع پر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ ہم خدمت اور سیاست دونوں میں منفرد حیثیت رکھنے والی جماعت ہیں۔ نفرت اور عصبیت کے بجائے بلا تفریق رنگ و نسل و زباں سندھ کے شہری اور دیہی علاقوں میں ترقی چاہتے ہیں۔ ملکر صوبے کو مثالی بنانا چاہتے ہیں۔ہم چاہتے ہیں کہ ایم کیو ایم پاکستان غریب اور مظلوم عوام کو ایوانوں کے ساتھ ساتھ برابری کی بنیاد پر تمام حقوق دلائے۔ جسکے لئے جہد مسلسل کر رہے ہیں۔ انہوں نے تمام شمولیت اختیار کرنے والے ساتھیوں
کو مبارکباد پیش کی اور کہا کہ سب ملکر سندھ بھر میں تنظیم کو مضبوط کریں۔اسکا فکر و فلسفہ عام کریں۔ عوام کی خدمت میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔ایم کیو ایم پاکستان نکھر رہی ہے وہی امیدوں کا مرکز ہے اور ہم آپ کی اور عوام کی امیدوں پر پورا اترنے کی پوری کوشش کریں گے۔ دریں اثناء ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی و اراکین رابطہ کمیٹی نے ٹھٹھہ دھابیجی یونین کونسل کے کمیٹی ممبر محمد کاشف شیخ کے بڑے بھائی آصف شیخ کے ناگہانی حادثے میں جاں بحق ہونے پر گہرے دکھ و افسوس کا اظہار کیا اور انکے ایصال ثواب کے لئے فاتحہ خوانی کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *